مشرف کی نئی سیاسی جماعت

بورے والااپڈیٹس نیوز(چوہدری اصغر علی جاوید سے)پیپلز پارٹی کے سینئر رہنماﺅں صمصام بخاری اور اشرف سوہنا کے پاکستان تحریک انصاف میں شمولیت کے اعلان کے بعد ملکی سیاست میں تلاطم تو برپا ہوا ہی تھا لیکن صمصام بخاری کے اس انکشاف نے کہ سابق صدر پرویز مشرف کی قیادت میں ایک نئی سیاسی جماعت کی تشکیل کی تیاریاںمکمل ہوچکی ہیں جس میں مختلف سیاسی جماعتوں کے ارکان شامل ہوں گے ایک طوفان برپا کردیا ہے۔ ذمہ دار ذرائع کے مطابق سابق صدر پرویز مشرف کی مجوزہ نئی سیاسی جماعت میں پیپلز پارٹی کے علاوہ ن لیگ ،ق لیگ اور ایم کیو ایم کے اہم ستون شامل ہوں گے۔ سیاسی مبصرین کا کہنا ہے کہ اس وقت ملک میں قومی حکومت کا قیام ناگزیر سمجھا جارہا ہے کیونکہ برسر اقتدار ن لیگ اور سندھ کی حکمران پیپلزپارٹی ڈیلور کرنے میں ناکام رہی ہیں ۔ اسٹیبلشمنٹ ”پک اینڈ چوز “ کے ذریعے قومی حکومت کے قیام کو اختلافات کا شکار نہیں بنا ناچاہتی اور قومی حکومت بنانے کامتبادل طریق کار ایک نئی سیاسی جماعت کے علاوہ اور کیا ہوسکتا ہے۔ سابق صدرپرویز مشرف جو مستقل مزاجی سے سیاست کے میدان میں ڈٹے ہوئے ہیں، خو دکو سیاسی کھلاڑی ثابت کرچکے ہیں۔ ذرائع کا دعویٰ ہے کہ سابق صدر پرویز مشرف کے سابق سیاسی ساتھیوں جن میں چودھری شجاعت ، محمد علی درانی اور طارق عظیم شامل ہیں کو بھی نئی سیاسی جماعت میں اہم عہدے ملیں گے۔ ن لیگ کے ناراض عہدیداروں جیسے غوث علی شاہ اور ذوالفقار کھوسہ بھی نئی سیاسی جماعت کا حصہ ہوں گے۔سیاسی پنڈتوں کا کہنا ہے کہ ایم کیوایم کے کچھ ارکان جن میں مصطفی کمال، فاروق ستار اور دیگر شامل ہیں، بھی اس نئی سیاسی جماعت کو جوائن کریں گے۔نئی جماعت کا اعلان ہوتے ہی انتخابات 2015ءکاڈول ڈالا جائے گا۔جس کے لئے اسٹیج سج چکا ہے۔ طاہر القادری کی اچانک وطن واپسی کو بھی اسی تناظر میں دیکھا جارہا ہے۔ ذرائع کا دعویٰ ہے کہ آئندہ چند ماہ کے دوران سیاسی افق پر حیران کن تبدیلیاں دیکھنے میں آئیں گی کیونکہ دہشت گردی کے عفریت پر قابو پانے کے بعد اور صوبہ سندھ میں معاشی دہشت گردی کے خلاف جاری آپریشن کے نتیجے میں ملک میں ایک سیاسی خلاءنمودار ہونے والا ہے جسے پر کرنے کے لیے مقتدر حلقوں نے اپنا منصوبہ ترتیب دے رکھا ہے۔ سیاسی تجزیہ نگاروں کاکہنا ہے کہ بھٹو حکومت کے خاتمے کے بعد پی این اے کی تحریک نے جس طرح جنم لیا تھا، اس وقت حالات بالکل اس طرح کے ہیں لیکن جس طرح اس وقت مذہبی جماعتوں کو آزمایا گیا لیکن وہ تولے گئے اور کم نکلے، اس وقت اسٹیبلشمنٹ آزمائے ہوﺅں کو آزما کر کوئی نیا خطرہ مول نہیں لینا چاہتی اور ہر قد م پھونک پھونک کر رکھنا چاہ رہی ہے ۔ سابق صدر پرویز مشرف کی مجوزہ نئی سیاسی جماعت الیکشن جیت کر حکومت بنائے گی کیونکہ ملک کودرپیش عالمی چلینجز کے پیش نظر ملک میں ایک ایسی قومی حکومت کا قیا م ناگزیر ہے جو کم از کم ملک کو استحکام کے رستے پر ڈال سکے۔ اب دیکھنا یہ ہے کہ ن لیگ کی حکومت موجودہ صورت حال میں اپنے پتے کس ہوشیاری سے کھیلتی ہے ۔ اس وقت عوام کوموت دکھا کر بخار پر راضی کیاجاسکتا ہے کیونکہ ان کی مشکلات کا طویل دور ختم ہونے کو نہیں آرہا اورحکومت کی جانب سے تین سال بعد ریلیف فراہمی کے وعدوں پر گذارا نہیں کیا جاسکتا۔

افطار ڈنر

بورے والااپڈیٹس نیوز(چوہدری اصغر علی جاوید سے)حلقہ ٹو بی آر سے مسلم لیگی راہنما امیدوار چیئرمین یونین کونسل 41چوہدری نثار احمد ولیکا کی جانب سے سید سلمان شاہد مہدی اور معززین علاقہ کے اعزاز افطار ڈنر۔

BUREWALA UPDATES 4-05072015

چوہدری طاہر انور واہلہ کو پارٹی کا ضلعی آرگنائزر نامزد

بورے والااپڈیٹس نیوز(چوہدری اصغر علی جاوید سے)جنوبی پنجاب کے آرگنائزر مخدوم شاہ محمود قریشی کی طرف سے سابق ضلعی صدر پی ٹی آئی وہاڑی چوہدری طاہر انور واہلہ کو پارٹی کا ضلعی آرگنائزر نامزد ہونے پر مبارک باد۔

BUREWALA UPDATES 5-05072015

Burewala's First Online News Website

Follow

Get every new post delivered to your Inbox.

Join 69 other followers